August, 2019

now browsing by month

 

AirTel Brand

The Brand

#Airtel

It’s not a plan,it’s a life style.

Our Brand

Airtel was born free, a force unleashed into the market with a relentless and unwavering determination to succeed. A spirit charged with energy, creativity and a team driven “to seize the day” with an ambition to become the most admired telecom service provider globally. airtel, in just ten years of operations, rose to the pinnacle of achievement and continues to lead.

As India’s leading telecommunications company, airtel brand has played the role of a major catalyst in India’s reforms, contributing to its economic resurgence.

Today we touch people’s lives with our Mobile services, Telemedia services, to connecting India’s leading 1000+ corporates. We also connect Indians living in USA, UK and Canada with our callhome service.

Quick Access

Help at Hand

New Connections

About Airtel

Airtel Prepaid

https://www.airtel.in/prepaid-recharge/

Online Mobile Recharge, Prepaid Mobile Recharge – Airtel
https://www.airtel.in › prepaid-recharge

Prepaid recharge– Online recharge your Airtel prepaid mobile. Get best data plans & unlimited calling offers on online mobile recharge.

People also search for

airtel postpaid plansaircel recharge planairtel lifetime validity recharge 43airtel richardairtel recharge codeonline recharge vodafone

Internet Access

How Will RBI’s 1.76 Lakh Crore Reserve Transfer Help The Economy?

Rajdhani Delhi Mai Mob Lynching!

Siasat

NEWS

MEDIA

TECHNOLOGY

CRIME

ENTERTAINMENT

LIFESTYLE

FRESH REGISTRATION FOR OVERSEAS SCHOLARSHIPS (SC,ST,BC,Minority)

https://telanganaepass.cgg.gov.in/OverseasReg.do

Passport Photograph of Student* :
Bonafide Certificate form institute where candidate has studied last* :
Ration Card :
SSC Certificate* :
Aadhar* :
Transfer Certificate* :
GRE/GMAT Score Card* :
TOEFL/IETS Score Card* :
Bank Passbook* (1st page) :
Admission letter from Foreign University (e.q I-20)* :
Passport Copy* :
Residence/Nativity Certificate* :
Mark Sheet of Last Qualified Course (Graduation/PG) Level* :

epasswebsite

https://epasswebsite.cgg.gov.in/

https://telanganaepass.cgg.gov.in/OverseasLinks.do

The Minority Development Department, Government of Telangana invites applications for its Chief Minister’s Overseas Study Scheme for Minorities 2019, Telangana from Postgraduate and PhD aspirants. The aim of the scholarship is the welfare of the backward communities socially, economically and educationally. The winner of the scholarship will get an award worth INR 10 Lakhs to pursue their higher education abroad. 

Overseas Scholarship Scheme for Minorities 2019, Telangana – OSSM

What is Chief Minister’s Overseas Scholarship Scheme for Minorities 2019, Telangana?

The Minority Development Department, Government of Telangana invites applications for its Chief Minister’s Overseas Study Scheme for Minorities 2019, Telangana from Postgraduate and PhD aspirants. The aim of the scholarship is the welfare of the backward communities socially, economically and educationally. The winner of the scholarship will get an award worth INR 10 Lakhs to pursue their higher education abroad. 

Who is offering this scholarship ?

The scholarship is being provided by the Minority Development Department, Government of Telangana.

Who can apply for this scholarship ?

The following applicants are eligible for the scholarship: 

  • The student should belong to a minority community.
  • The annual family income of the student shall be less than INR 2 lakhs per annum from all sources. 
  • For Post Graduate Course: 60% marks or equivalent grade in foundation degree in Engineering/Management/Pure Sciences/Agriculture Sciences/Medicine and Nursing/Social Sciences/Humanities
  • For PhD Courses: 60% marks or equivalent grade in P.G. course in Engineering/Management/Pure Sciences/Agriculture Sciences/Medicine/Social Sciences/Humanities
  • This is One Child in a family one-time Award, i.e, the award can be won by only one child in the family. The awardee should be a first-time winner of the award.
  • The student should have a valid TOEFL/IELTS & GRE/GMAT. 
  • The student should have obtained admission in an accredited Foreign University. 
  • The student should possess a valid Passport.

What are the benefits ?

The selected scholar will receive the following benefits: 

  • The scholar will receive the scholarship amount of INR 10 Lakhs towards fees and living expenses by way of a grant subject to his/her joining the course in the following installments:
    • Installment-I: An amount of INR 5.00 lakhs shall be payable to the students upon production of the landing permit / I-94 Card (Immigration Card)
    • Installment-II: An amount of INR 5.00 lakhs shall be payable to the students upon production of the 1st Semester results
  • The student shall be eligible for an educational loan of INR 5.00 lakhs from any Nationalized Bank at prevailing rates of interest.
  • The awardees are permitted to supplement their prescribed allowances by undertaking research/teaching assistantship, thus, earning from research/teaching assistantship.
  • Utilization certificate shall be obtained from the student with a due endorsement of the concerned university authorities for record purpose under the scheme.

How can you apply ?

Follow the steps to apply: 

Step 1: Apply online by visiting the official epass website of the Government of Telangana.
Step 2: Click on ‘Overseas Scholarship Services’
Step 3: Scroll down to the relevant scholarship and click on ‘Registration‘.
Step 4: Provide all the relevant details, attach necessary documents.
Step 5: Submit the application.

What are the documents required for the Chief Minister’s Overseas Scholarship Scheme for Minorities 2019, Telangana?

The following documents need to be attached along with the application: 

  • Caste certificate from Mee Seva
  • Income certificate from Mee Seva
  • Date of birth certificate
  • Aadhaar card
  • E-pass ID number
  • Residential/nativity certificate
  • Passport copy
  • Mark sheet from SSC/Inter/Graduate/PG Level
  • GRE / GMAT or equivalent qualifying exam/test scorecard
  • TOFEL/IELTS score card
  • Admission offer letter from Foreign University (I-20, letter of Admission or equivalent)
  • Copy of the latest Tax Assessment
  • Copy of Bank Pass Book of a nationalised bank
  • A scanned photograph of the applicant 
  • Salary certificate from the employer (if applicable)

What are the selection criteria ?

  • The Selection shall be conducted by a State Level Screening Committee through the Bio-data provided by the candidates who applied online. The selection committee will be constituted by the Government with the following members: 
    • Chairman- Principal/Special Secretary, Minorities Welfare Department 
    • Member- Principal Secretary, S.C.D. Department 
    • Member- Vice Chancellor, JNTU 
    • Member- Commissioner, Technical Education
    • Member-Convenor- Director, Minorities Welfare 

Terms and Conditions

  • The maximum age under the scheme shall not exceed 30 years as on 1st July of the year of the advertisement.
  • One Child in a family one-time Award: Not more than one child of the same parents/guardians will be eligible and to this effect, a self-certification will be required from the candidate. The awardee cannot be considered for the second or subsequent times. 
  • The selected candidate has to join the concerned university within one year of communication of selection. On expiry of this specified period of time, the award will be automatically cancelled and come to an end. No request for an extension of time for availing the award is permissible under the scheme.  
  • The candidate shall not change the course of study or research for which the scholarship has been sanctioned
  • It will be the responsibility of the candidate to obtain the appropriate visa for a country wherein one intends to study further under the award from the scheme and the Visa issuing authorities may kindly see that only such type of visa be issued which only permits the candidate to pursue specified course abroad and thereafter the candidate returns to India. 
  • The applications should be complete in all respects and should be accompanied by all relevant documents. Any incomplete application is liable to be rejected. 
  • 33% of the awards shall be earmarked for Women candidates (if the adequate number of eligible women candidates are not available then male candidates may be selected against this 33%). 
  • The registration shall be made under the scheme online only. 

Important documents

Information

Guidelines

Important Links

Contact details

Minorities Welfare Department
Ground Floor, D Block,
Telangana Secretariat-500022

Email: secy-mw@telangana.gov.in
Phone: 040-23452983

دور سیاست ہے،نہ سمجھوگے تو مٹ جائوگے !

Skip to content

Toggle navigation*کھانا اور پانی کااحترام کریں۔۔!! برباد نہ کریں۔۔۔!!!*حق کبھی ناکام نہیں ہوتا مولانا مودودیؒ کے دو خطوط شورشؔ کشمیری کے نامافواہوں کی وجہ سے لاء اینڈآرڈربدتر:اکھلیش یادوبہار میں اب’بولے زباں کیسری‘نہیں چلے گا:پان مسالہ کی فروخت پر ایک سال کی پابندی عائدایودھیا کیس:سپریم کورٹ میں رام جنم بھومی کمیٹی اور ہندو مہاسبھا کی غیر منطقی دلیل ’شہنشاہِ بابر کے اخلاف کسی عمارت کے مالک ہو سکتے ہیں ، مسجد کے نہیں‘کرتارپور کوریڈور کو لے کر بھارت، پاکستان نے کی تکنیکی مذاکراتحکومت مالیاتی ایمرجنسی کا اعلان کرے: کانگریسسرکار نے کئی بینکوں کے آپس میں الحاق کا اعلان کردیا.اب ملک میں صرف 12 سرکاری بینک ہی رہ جائیں گےمودی راج کی سب سے زیادہ سست رفتار میں ترقی کی شرح، چی ڈی پی گھٹ کر ہوئی 5 فیصدفرضی پوسٹ کے جھانسے میں نہ آئیں، ریٹرن بھرنے کی آخری تاریخ آج*کھانا اور پانی کااحترام کریں۔۔!! برباد نہ کریں۔۔۔!!!*حق کبھی ناکام نہیں ہوتا مولانا مودودیؒ کے دو خطوط شورشؔ کشمیری کے نامافواہوں کی وجہ سے لاء اینڈآرڈربدتر:اکھلیش یادوبہار میں اب’بولے زباں کیسری‘نہیں چلے گا:پان مسالہ کی فروخت پر ایک سال کی پابندی عائدایودھیا کیس:سپریم کورٹ میں رام جنم بھومی کمیٹی اور ہندو مہاسبھا کی غیر منطقی دلیل ’شہنشاہِ بابر کے اخلاف کسی عمارت کے مالک ہو سکتے ہیں ، مسجد کے نہیں‘کرتارپور کوریڈور کو لے کر بھارت، پاکستان نے کی تکنیکی مذاکراتحکومت مالیاتی ایمرجنسی کا اعلان کرے: کانگریسسرکار نے کئی بینکوں کے آپس میں الحاق کا اعلان کردیا.اب ملک میں صرف 12 سرکاری بینک ہی رہ جائیں گےمودی راج کی سب سے زیادہ سست رفتار میں ترقی کی شرح، چی ڈی پی گھٹ کر ہوئی 5 فیصدفرضی پوسٹ کے جھانسے میں نہ آئیں، ریٹرن بھرنے کی آخری تاریخ آج*کھانا اور پانی کااحترام کریں۔۔!! برباد نہ کریں۔۔۔!!!*حق کبھی ناکام نہیں ہوتا مولانا مودودیؒ کے دو خطوط شورشؔ کشمیری کے نامافواہوں کی وجہ سے لاء اینڈآرڈربدتر:اکھلیش یادوبہار میں اب’بولے زباں کیسری‘نہیں چلے گا:پان مسالہ کی فروخت پر ایک سال کی پابندی عائدایودھیا کیس:سپریم کورٹ میں رام جنم بھومی کمیٹی اور ہندو مہاسبھا کی غیر منطقی دلیل ’شہنشاہِ بابر کے اخلاف کسی عمارت کے مالک ہو سکتے ہیں ، مسجد کے نہیں‘کرتارپور کوریڈور کو لے کر بھارت، پاکستان نے کی تکنیکی مذاکراتحکومت مالیاتی ایمرجنسی کا اعلان کرے: کانگریسسرکار نے کئی بینکوں کے آپس میں الحاق کا اعلان کردیا.اب ملک میں صرف 12 سرکاری بینک ہی رہ جائیں گےمودی راج کی سب سے زیادہ سست رفتار میں ترقی کی شرح، چی ڈی پی گھٹ کر ہوئی 5 فیصدفرضی پوسٹ کے جھانسے میں نہ آئیں، ریٹرن بھرنے کی آخری تاریخ آج

distant-politics-dont-understand-be-erased

یہ دور سیاست ہے،نہ سمجھوگے تو مٹ جائوگے !

 اگست 29, 2019

یہ دور سیاست ہے ،نہ سمجھوگے تو مٹ جائوگے !

اشفاق رحمن
9504042697

مسلمان ہیرےکی طرح چمکداراور قیمتی تھا ۔مذہبی امور، سماجی معاملات ،سیاست اورلین دین قابل تقلید تھے اور اخلاقیات کاپرچم ساتویں آسمان پر لہرارہا تھا، لیکن مذہبی دکانداروں اور مسلکی تاجروں نے قوت فکر بیچ کر مسلمانوں کوخالی ڈبہ بنا دیا ،جس سے وہ آہستہ آہستہ ذہنی طور پر کنگال ہوگئے اور تباہی کے کگار پرپہنچ گئے ۔ایسا کیوں ہوا ؟ ۔کبھی آپ سنجیدگی سےغور کریں تو پتہ چلے گا کہ اس کی بنیادی وجہ سیاسی بیداری کا فقدان اور علما ء سو ء ہیں۔
گہرائی میں جائیں تو معلوم ہو گا کہ علماء نے مذہبی تجارت اور مسللی دکانداری کر کے ہندوستانی مسلمانوں کا بیڑہ غرق کردیا۔ ذاتی مفاد ، نجی سکھ اور اپنی اجارہ داری بڑھانے کیلئے علماء نے قرآن و اسلام کی اصل روح بتانے کے بجائے ،اپنے اپنے حساب سے دین سکھائے ، مسلک کی گھٹی پلائی ، ڈیڑھ اینٹ کی مسجد بنانے اور اس پر قائم رہنے کی تعلیم دی ۔اس فکری ڈاکہ کی وجہ سے اتحاد و اخوت ،ایک قرآن ، ایک نبی اور ایک مذہب کا سبق مسلمان پوری طرح مٹا بیٹھے ۔آج مسلمان ہندوستان میں جس درد اور کر ب سے گزر رہے ہیں ،کشمیر سلگ رہا ہے ، آسام سسک رہا ہے ،این آرسی بھیانک شکل اختیار کئے ڈرا رہی ہے وہ سب اسی کا نتیجہ ہے ۔
ملک کی 13کروڑ بھگوان کو پوجنے والے ایک سیاسی دائرے میں سمٹ کر اکھنڈ بھارت کا سپنا پورا کرنے میں لگے ہیں اور ایک امت ،ایک مذہب ،ایک قرآن اور ایک رسولؐ کو ماننےوالی قوم 13ٹکڑوں میں بٹ کر بے وقعت ہو چکی ہے ۔اس قوم میں آپسی رنجش ،جلن ،حسد اس قدر بڑھ گئی ہے کہ سیاسی قوت ،ایمانی اخوت اور لیڈر شپ کی طرف دھیان ہی نہیں جاتی۔یہ ہمیشہ ایک پارٹی کو ہرانے کے چلتے دوسری پارٹی کا ساتھ دیتی ہے اور اس کا شکار بن کرفنا ہو جاتی ہے۔جب تک قوم اپنی قیادت اور اپنی سیادت کیلئے متحد ہو کر ہارنے کو تیار نہیں ہو گی ، اصل جیت نہیں مل پائے گی ۔اپنی لیڈر شپ پر بھروسہ نہیں کر ے گی ،ذلت کی کھائی سے نہیں نکل پائے گی ،اور اس کا حشر مزید بد سے بد تر ہو تا جائے گا ۔
مذہبی ادارے اورملی تنظیمیں (جو در اصل مذہبی دکان ہیں)حکومت وقت کی دلالی اورعیار لیڈران کی قدم بوسی میں لگی ہوئی ہیں ۔سیاسی طور پر بے حس ہو چکےہیں ، وہ تو چند سکوں میں خود بھی بک جاتے ہیں اور قوم کو بھی بیچ دیتے ہیں ۔ انہیں تو سودا کر نا بھی نہیں آتا ،قیمتی ایمان سستے میں بیچ کر خوش ہو تے ہیں اور خود کو طرم خاں کہلاتے ہیں ۔اسی سوچ کا نتیجہ ہے کہ عالمی پیمانے پر کسی بھی مسلم ملک کے پاس آرڈیننس فیکٹری یعنی اسلحہ بنانے کا کارخانہ نہیں ہے ،ضرورت پڑنےپربھیک کاکٹورہ لے کر ملکوں ملکوں پھرتے ہیں۔ہمارےملک میںادارے کی آڑ میں شخصیت کو چمکانے والے مذہبی دکانداروں کی بے راہ روی کا نتیجہ ہے کہ تنظیمیں پیچھے رہ جا تی ہیں اور فر د آگےبڑھ جا تا ہے ۔یہ ملی رہنما آر ایس ایس کے طریقے کار سے بھی نہیں سیکھتے کہ وہاں تنظیم ہی سب کچھ ہے ، تنظیم سے الگ ہو کر لال کر شن اڈوانی بے کار ، پروین توگڑیاکچھ نہیں ،رجو بھیاگمنام ۔آپ دیکھیں کہ آر ایس ایس سے وابستہ رہنمائوں کے پاس کچھ بھی نہیں ،لیکن ان کی قوم کے پاس سب کچھ ہے۔مسلم رہنمائوں کے پاس دولت ، وراثت ،سیاسی اہمیت اور انفرادی حیثیت سب کچھ ہے ،لیکن مسلم قوم کے پاس کچھ بھی نہیں ۔
مذہبی دکاندار مسلمانوں کو بانٹنے اور اپنے اپنے حساب سے جنت میں جانے کا راستہ بتا رہے ہیں ،کوئی یہ دیکھنے اور سمجھنے کو تیار نہیں کہ انتشار ،غلط رہنمائی اور سیاسی بے وقعتی کی وجہ سے ان کی دنیا جہنم ہو تی جارہی ہے ۔وہ یہ بھول چکے ہیں کہ نبی ﷺ نےسیاسی قوت بننے کیلئے وحدت کا سبق دیا ، شعور، سوچ کی پختگی اور پڑھنے کے لئے چین تک جانے کو کہا ۔آج این آر سی کی چنگاری سلگائی جا رہی ہے ، اس کی معرفت ہر مسلمان کی شہریت پر سوالیہ نشان لٹکایا جا رہا ہے۔یہی نہیں ہٹ دھرمی اتنی بڑھ گئی ہے کہ ایوان میں بھی استعماریت داخل ہو چکی ہے ، جو خاموش زبان میں مسلمانوں کو بتا رہی ہے کہ ’ہم تم کو ماریں گے ،چپ بھی رہنا ہو گا اور جے شری رام بھی کہنا ہو گا ۔یہ اس لئے کہ مسلمان صرف ان ہی مدعوں میں الجھے رہیں ،ہر چہرہ پریشان اور ہر مسلمان اس فکر میں لگ جائے کہ پتہ کر و کہ 1951 میں میرا خاندان کہاں تھا؟،باپ دادا کی شناخت کھوجو، شہریت ثابت کرنے کیلئے دستاویزات کا جگاڑ کرو۔مسلمان اگر شروع ہی سے اپنی لیڈر شپ اور قیادت پر دھیان دیتے تو ایسے قانون ہی نہیں بنتے۔ہندوستان میں مسلمانوں کو چھوڑ کر کسی بھی مذہب کے شہری پر یہ قانون لاگو نہیں ہو رہا ہے۔
علماء اورمذہبی رہنما آج تقریب کر نے کےلئے بے انتہا پیسے لیتے ہیں ، وہ بھول جاتے ہیں کہ مذہب کی تجارت یہیں سے شروع ہو تی ہے ۔پیسے لے کر تقریر کرنے والے اپنے کو بڑاعالم سمجھنے کی نادانی کرتے ہیں ،آئی ہوئی بھیڑ کو وہ اپنا پیرو کاربنانے کی کوشش کرتے ہیں اور مذہبی بے راہ روی کا شکار بناتے ہیں ۔ ہمارے ملک کےمسلمانوں کاالمیہ یہ بھی ہے کہ انتخاب کے وقت وہ حساب و کتاب کر کے مسلم امیدوار کو ہارنے والا بنا دیتے ہیں ، گندی اور سطحی سوچ کی وجہ سے مسلم لیڈر شپ بے بس ہو جاتی ہے۔آزادی کے بعد سے ہم نے نام نہاد سیکولر پارٹیوں کو مضبوط کیا ،لیکن انہوں نے ہی سب سے زیادہ مسلمانوں کی جڑیں کاٹیں۔سیکولر پارٹیوں کی گندی پالیسی کا نتیجہ ہے کہ آج ہندوستانی مسلمانوں کی روہنگیا والی حالت ہو تی جا رہی ہے،کشمیر فلسطین بننے کی راہ پر گامزن ہے ۔تاریخ بتا تی ہے کہ جو قوم اپنا حق لینے کیلئے لڑنے کوتیار نہیں ہو تی ،انصاف اور جمہوریت میں دیئے گئے حقوق کو نظر انداز کر دیتی ہے ، وہ صرف لاشیں ڈھوتی ہے ۔ہمیں ٹھنڈےدل سے سوچنا چاہیے کہ مسلم لیڈر شپ آسمان سے نہیں اترے گا ،اسی ملت سے پیدا ہو گا ،ہمیں بس سچے دل سے تلاش کی ضرورت ہے ، کیونکہ مسلمانوں کا پروڈکشن ہائوس بنجرنہیں ہوا ہے ، ان کی کوکھ بانجھ نہیں ہوئی ہے۔اگر ہمارے پاس قیادت ہو تی،لیڈر شپ ہو تا تو ہم اس جمہوری ملک میں جوڑتوڑ کر کے بارگننگ کرتے،کسی کے ساتھ سمجھوتہ کرتے اور خطرناک قانون بننے نہیں دیتے ۔
مسلم قوم جو نعرہ تکبیر کے نام پر خود کو قربان کر دیتی تھی وہ آج جے شری رام کے نام پر زندگی دائو پر لگا رہی ہے ،ہجومی تشدد کا سلسلہ تھمتا نظر نہیں آرہا ہے ، محمد اخلاق سے تبریز تک ایک کے بعد ایک 200سے زائد مسلمان اس کے شکار ہو چکے ہیں ،بی جے پی اور آر ایس ایس کے لیڈران کھلے عام مسلمانوں کی گردن کاٹنے کا پیغام دے رہے ہیں،حد تو یہ ہے کہ دلت بھی آلہ کار بن کر مسلمانوں کو مارنااپنا حق سمجھنے لگا ہے ۔ اس سے پہلے کہ آپ کانمبر آجائے اس خطرناک رجحان کو روکنا ہو گا ،سسٹم اور حکومت کی نیند حرام کرنے کیلئے مسلمانوں کو جاگنا ہو گا ۔ظلم ونا انصافی کے خلاف ہم انا ہزارے کی طرح رام لیلا اور گاندھی میدان میں بھوک ہڑتا ل نہیں کر سکتے ، جاٹوں کی طرح ٹرین روک نہیں سکتے ، گجروں کی طرح بسوں کو آگ نہیں لگا سکتے ،سکھوں کی طرح سرکار کو یر غمال نہیں بنا سکتے ، کیونکہ ہم ہیڈ لیس کمیونٹی ہو گئے ہیں ۔اب وقت نہیں رہا کہ مسلمان ساحل پرکھڑے طوفاں کا نظارہ کریں ،بلکہ جو جہاں ہے اور جس حال میں ہے طوفان سے لڑنے کیلئے میدان عمل میں کو د پڑیں،اس کا سب سے موزوں حل اتحاد امت ،اپنی قیادت اور اپنی سیاست اور پوری قوت کے ساتھ جمہوری طریقےسے اپنی بات منوانا ہے ، اس کے سوا کوئی چارہ کار نہیں ۔WhatsAppFacebookTwitterEmailShareکیٹاگری میں : مضامین

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

مزید پڑھیں

a-global-honor-kindness
احسان فراموشی کا عالمی اعزاز
lightning-drops-state-congress-like-sinking-titanic-ship-responsible-leaders
اپنے ہی گراتے ہیں نشیمن پہ بجلیاں کانگریس کی حالت ڈوبتے ہوئے ٹائٹینک جہاز…
they-are-and-we-are-too
وہ بھی ہیں اورہم بھی ہیں!!!
cruel-victims-never-rope-such-cruelty-never-happen-gods-service
مظلوموں کی کبھی داد رسی نہ ہو تو یہ ظلم ہوگا
distant-politics-dont-understand-be-erased
یہ دور سیاست ہے،نہ سمجھوگے تو مٹ جائوگے !
first-month-islamic-calendar-muharram-ul-haram
اسلامی کیلنڈر کا پہلا مہینہ محرام الحرام

اپنا تبصرہ بھیجیں

آپکا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا

اپنا تبصرہ لکھیں

آپکا نام*آپکا ای میل ایڈریس*

مقبول خبریں

یوم مزدور کی چھٹی یا یوم فاقہ

1_may_2019-labour_day-holiday-fasting_day

بڑھے ہوئے پیٹ سے چھٹکارہ پانے کے لیے آسان تدابیر

#Easy, #remedies, #get, #rid, #increased, #stomach,

مدرسہ منیر الہدیٰ للبنات کاماریڈی کے امتحانات سالانہ اور سالانہ تعطیلات کا اعلان

muneerul huda

کولکاتہ روڈ شو: اونٹ پہاڑ کے نیچے

معروف صحافی،نقاد فضیل جعفری

famous-journalist-fazail_jafri

۱۴؍ سالوں بعد جیل سے رہا مظفر تنویر نے قانونی امداد فراہم کرنے کے لیئے جمعیۃ علماء کا شکریہ ادا کیا

after-14-years-muzaffar-released-jail-thanked-jamiat_ulema-giving-legal-aid

آئی ایم اے کی گھناؤنی چال, علما کی آڑ میں ملت کا استحصال ……..

ima-shouting-trick-exploitation-nation-muslim-scholars

الیکشن کمیشن نے چندر شیکھر راؤ کو پایا ’اینٹی ہندو‘ کا مجرم، احتیاط کی دی صلاح

election_commission-found-chandra_shekhar_rao-anti-hindu-offender-cautioned-counsel

بحران کے باوجود پاکستانی میڈیا میں سرمایہ کاری

despite-crisis-investing-pakistan-media

جمعیۃ علماء واحد تنظم ہے جو دہشت گردی کے معاملات کی منظم طریقے ستے پیروی کررہی ہے جیل سے رہائی کے بعد ڈاکٹر شریف دفتر جمعیۃ علماء پہنچ کرشکریہ ادا کیا، ہائی کورٹ سے انصاف ملنے کی امید

jamiat_ulama-follows-systematic-manner-terrorism-matters-release-prison-dr_sharif-high_court

اہم کیٹا گریز

اسلامیات / ادبیات (243)اشتہارات (2)اہم خبریں (2349)بین الاقوامی(1147)تعلیم اورروزگار کی خبریں (35)حیدرآباد(431)عرب دنیا (1252)مضامین(746)هوم (684)ٹكنالوجی (1)ٹكنالوجی /صحت(47)کھیل (55)ہندوستان (674)

Add No. 1

© Copyright : ITTUTOR 2014 All Right Reserved | Privacy Policy. Designed By: Maqsood YamaniWhatsAppFacebookTwitterEmailShare

Learn English

ENGLISH FREE DEMO CLASS
AT, DIGITAL INDIA SCHOOL, BANDLAGUDA MAIN ROAD,HYDERABAD,T.S.INDIA.
We are pioneer in English Language Courses at Hyderabad. Since 1987 we have trained thousands of students with great name.

We have courses that range from the very basics of English to high end for English Learning Skills and also we offer soft skills such as Presentation Skills, Group Discussion skills, Interview training. We also offer various courses like Campus Recruitment Training, Fluency Development, Communication Skills, Email / Writing Skills and Personality Development.

We believe that each student’s English requirement is different and it needs to be addressed in a customized manner. Depending on each student’s needs and future plan, we draft individual modules and design a learning plan that will be unique to him or her. We call it: ‘Need Based Teaching’.

We have been providing the courses with the help of our State of Art Language Lab Facility at our institutions. Which comprises of text books, work books, activity sheets, cds, dvds and a complete language lab.