افغانستان کی سیاسی تبدیلیوں پر تبصرہ کرتے

Imperialist powers should learn a lesson from this episode and forever refrain from the policy of unnecessary interference in the affairs of poor countries to further their own vested interests.

New Delhi: Commenting on the political changes in Afghanistan, Jamaat-e-Islami Hind (JIH) President Syed Sadatullah Husaini has hoped that these changes will end years of unrest and bloodshed in the country and restore peace and order in the region and help to reinstate the rights of the Afghan people.

In a press statement, the JIH President said, “20 years ago, the overthrow of the Afghan government through military action, the brutal atrocities on innocent civilians by colonial and imperialist forces, the series of bombings and raids on its cities and the constant attempts to impose the will of foreign powers on the Afghan people is a reprehensible chapter of recent history. It is gratifying to note that the perseverance and struggle of the Afghan people resulted in the withdrawal of the imperialist forces from their country.”

Mr. Husaini said that the imperialist powers should learn a lesson from this episode and forever refrain from the policy of unnecessary interference in the affairs of poor countries to further their own vested interests. He asserted that the United Nations and the international community should also learn a lesson from this and put in place a strong process to prevent the manipulation and interference of weaker nations at the hands of powerful countries. He expressed happiness and satisfaction that the transfer of power was completed peacefully without much bloodshed.

The JIH President drew the attention of the Taliban to the fact that the eyes of the whole world are now on them and are closely monitoring their behaviour and actions. “The Taliban have the opportunity to present to the world a practical example of the benevolent and merciful system of Islam. We would like to draw their attention to the fact that Islam is the advocate of peace and well-being. It gives freedom of belief. The protection of the lives and property of all human beings, including minorities, is of paramount importance to Islam. Islam is also very sensitive about women’s rights. We hope that the new rulers of Afghanistan will strictly adhere to these teachings of Islam and set an example before the world of an Islamic Welfare State where everyone is free from fear and terror and lives a peaceful and prosperous life with equal opportunity to flourish and prosper. We also hope that a new government shall soon be established in Afghanistan by popular vote in the democratic and consultative spirit of Islam that represents all sections of the country and one that shall prove to be a source of lasting unity and stability among the Afghan people. Reports that the Taliban have announced a general amnesty, assured peace and order to Sikhs, Hindus and other minorities, and hinted at dialogue and co-operation with all countries of the world are welcome,” he added.

Commenting on Indo-Afghan relations, the JIH chief has said that our country India and Afghanistan have a long-standing and healthy relationship. He continued, “In recent years, India has also played an important role in the development of Afghanistan. We hope that this warmth and solid relations will continue and be further strengthened. We also wish to remind the Government of India of its responsibility to initiate healthy relations with the new Afghan government and to play its part in building and developing Afghanistan and ensuring peace and security throughout South Asia.”

Imperialist forces should learn a lesson from Afghanistan -Syed Sadatullah Hussaini For more videos, subscribe to our channel: http://bit.ly/2dVSgua Check out Jamaat-e-Islami Hind for more information: http://jamaateislamihind.org/eng/ Follow Jamaat-e-Islami Hind here: Facebook: http://bit.ly/2dFjjwm Twitter: http://bit.ly/2e0OC3y Google+: https://plus.google.com/u/0/+webJIHhind

افغانستان کی سیاسی تبدیلیوں پر تبصرہ کرتے

ہوئے امیر جماعت اسلامی ہند جناب سید سعادت اللہ حسینی نے امید ظاہر کی کہ ان تبدیلیوں سےافغانستان میں برسوں سے جاری بدامنی اور خون خرابہ ختم ہوگا اور خطے میں امن و امان کے قیام اور افغان عوام کے حقوق کی بحالی میں مدد ملے گی۔ بیس سال پہلے استعماری طاقتوں کی فوج کشی کے ذریعہ حکومت کا خاتمہ ، غاصب فوجوں کے ذریعہ معصوم عوام پر بہیمانہ مظالم، بمباری اور شہروں کو تاراج کرنے کا پیہم سلسلہ اورعوام پر پر اپنی مرضی مسلط کرنے کی مسلسل کوشش، یہ واقعات حالیہ تاریخ کا افسوس ناک اور قابل مذمت باب ہیں ۔ یہ بات خوش آئند ہے کہ افغان عوام کی استقامت اور جدوجہد کے نتیجے میں اس ملک سے استعماری افواج کا انخلا عمل میں آیا۔ امیر جماعت نے کہا کہ اس واقعے سے استعماری طاقتوں کو سبق لینا چاہیے اور اپنے مفادات کی خاطر غریب ملکوں کے معاملات میں ناپاک مداخلت کی پالیسی سے ہمیشہ کے لیے باز آنا چاہیے۔اقوام متحدہ اور عالمی برادری کو بھی اس واقعہ سے سبق لینا چاہیے اور طاقتور ملکوں کی جانب سے چیرہ دستیوں اورمداخلتوں کی روک تھام کا مضبوط نظام بنانا چاہیے۔ امیر جماعت نے اس بات پر خوشی و اطمینان کا اظہار کیا کہ حکومت کی منتقلی کا عمل پر امن طور پر بغیر کسی بڑے خون خرابے کے مکمل ہوا۔ اپنےبیان میں امیر جماعت نے طالبان کو توجہ دلائی کہ اس وقت ساری دنیا کی نظریں ان پر ٹکی ہوئی ہیں اور ان کے طرز عمل اوراقدامات کا باریک بینی سے جائزہ لے رہی ہیں۔ طالبان کو یہ موقع حاصل ہے کہ وہ اسلام کے نظام رحمت کا عملی نمونہ دنیا کے سامنے پیش کریں۔ ہم اس موقع پر انہیں متوجہ کرنا چاہتے ہیں کہ اسلام امن و امان کا داعی ہے۔ وہ عقیدے کی آزادی دیتا ہے۔ اقلیتوں سمیت تمام انسانوں کے جان و مال کا تحفظ اسلام کی نہایت اہم قدر ہے۔ خواتین کے حقوق کے تعلق سے بھی اسلام نہایت حساس ہے۔ ہم امید کرتے ہیں کہ افغانستان کے نئے حکمراں اسلام کی ان تعلیمات پر سختی سے عمل پیرا ہوں گے اور ایسی فلاحی مملکت کا نمونہ دنیا کے سامنے پیش کریں گے جہاں ہر ایک کو خوف و دہشت سے آزادی حاصل ہو اور ترقی و خوشحال زندگی کے بھرپور اور مساوی مواقع حاصل ہوں۔ ہم یہ بھی امید کرتے ہیں کہ اسلام کی جمہوری و شورائی روح کے مطابق وہاں جلد سے جلد عوام کی رائے سے بننے والی ایسی حکومت تشکیل پائے گی، جو ملک کے تمام طبقات کی نمائندگی کرے اور افغان عوام کے درمیان پائیدار اتحاد و استحکام کا ذریعہ ثابت ہو۔ یہ اطلاعات خوش آئند ہیں کہ طالبان نے عام معافی کا اعلان کیا ہے، سکھوں، ہندووں اور دیگر اقلیتوں کو امن و امان کا تیقن دیا ہے اور دنیا کے تمام ممالک کے ساتھ مذاکرات اور تعاون و اشتراک کا عندیہ دیا ہے۔ امیر جماعت نے ہند افغان تعلقات پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ ہمارے ملک ہندوستان اور افغانستان کے تعلقات دیرینہ ہیں۔ حالیہ برسوں میں افغانستان کی تعمیر و ترقی میں بھی ہمارے ملک کا اہم رول رہا ہے۔ ہم امید کرتے ہیں کہ ان تعلقات میں اور استحکام پیدا ہوگا اور اس کی خاطر دونوں جانب سے گرم جوشی کا مظاہرہ ہوگا۔ ہم ہندوستانی حکومت کو بھی اس کی یہ ذمے داری یاد دلاتے ہیں کہ وہ افغانستان کی نئی حکومت سے صحت مند روابط کا آغاز کرے اور افغانستان کی تعمیر و ترقی میں اور پورے جنوبی ایشیا میں امن و سلامتی کو یقینی بنانے میں اپنا کردار ادا کرے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *